Select your Top Menu from wp menus

حبّ الوطنی کے جزبہ سے سرشارشاعر،پنڈت برج نارائین چکبستؔ 

حبّ الوطنی کے جزبہ سے سرشارشاعر،پنڈت برج نارائین چکبستؔ 

محمد عبّاس دھالیوال،

 پنڈت برج نرائین چکبستؔ کی یومِ پیدائیش 19 جنوری کے ضمن میں خصوصی آرٹیکل۔

ہندوستانی گنگا جمنی تہذیب کی جب بات چلتی ہے تونظیرؔ اکبرآبادی کے بعد اس ضمن میں جونام سرفہرست ہمارے سامنے جس محب وطن شاعرکا نام آتا ہے۔ وہ ہے اردو نظم میں اپنا منفرد و جداگانہ مقام رکھنے والے شاعر آنجہانی پنڈت برج نارائین چکبست ؔ کا ۔۔ کشمیری پنڈتوں کے خاندان سے تعلق رکھنے والے چکبست 19جنوری 1882 کو فیض آباد میں پیدا ہوئے ،مگر چند سال بعد ہی لکھنؤ چلے آئے ۔آپ کی بقیہ تعلیم و تربیت، اردو ادب کی نفاست کا گہوارہ اور دبستاں کہلائے جانے وا لے اسی ادبی شہر یعنی لکھنؤ کی فضاؤں میں ہوئی،آپ نے فارسی اور اردو زبان سیکھنے کے ساتھ مغربی تعلیم بھی حاصل کی۔1905ء میں کیننگ کالج سے بی۔ اے ۔کی ڈگری حاصل کی اور 1908ء میں قانون کا امتحان پاس کر کے اپنی وقالت شروع کر دی اسی دوران آپ کی شادی ہو گئی ،لیکن قسمت کا کھیل دیکھیں کہ آپ کی بیوی کی بچے کی پیدائیش کے دوران موت ہوگئی۔
چکبست نے اپنے پیشہ یعنی وقالت میں بہت ہی کم عرصہ میں وہ مقام مرتبہ حاصل کیا کہ آپ کا شمار نامی وکلاء میں ہونے لگا۔
آپ کوشاعری کا شوق اوّل عمری سے ہی تھااسی ضمن میں افضال احمد نے اپنی کتاب ’’چکبست حیات اور ادبی خدمات ‘‘ میں چکبست کا ایک واقع بیان کرتے ہوئے لکھا ہے کہ ’’ ابھی آٹھ برس کی عمر تھی کہ ایک روز اپنے کوٹھے پر کھڑے تھے ۔سامنے نواب وزیر حسن صاحب کبوتر اڑا رہے تھے کہ اتنے میں کسی اور کا ایک کبوتر نواب صاحب کے کبوتروں کے جھنڈ میں شامل ہوکر گھر میں آگیا۔وزیر حسن صاحب نے فوراً کبوتر کو پکڑ لیاپھر اس کے پروں میں جیسے ہی گرہ لگاکرجیسے ہی اسکو چھوڑا،نہ معلوم کیسے گرہ کھل گئی اور کبوتر اڑگیانواب صاحب دیکھتے ہی دیکھتے رہ گئے۔چکبست نے جو اس تمام واقع کو دیکھ رہے تھے فوراً ایک شعر کہا۔۔
تڑپ کر توڑڈالے بند بازو کے کبوتر نے
بہت باندھا تھا کس کر ایک پر کو دوسرے پر سے
چکبست نے 1894 ء میں 12برس کی عمر میں ایک نظم ’’حب قومی ‘‘ کے نام سے لکھی تھی۔اس میں انکی پختہ خیالی کا اندازہ نظم کے اس شعر سے ہی کرسکتے ہیں کہ
لطف یکتائی میں جو ہے وہ دوئی میں کہا ں
برخلاف اسکے جو ہو سمجھو کہ وہ دیوانہ ہے
نخل الفت جن کی کوشش سے اگا ہے قوم میں
قابل تعریف ان کی ہمتِ مردانہ ہے
عموماً نئے شاعر اپنی شاعری کا آغاز غزلیات کی صنفِ شاعری سے کرتے ہیں لیکن چکبست نے اپنی شاعری کا آغاز پہلے پہل ہی نظم سے کیا ۔ آپ نے باقاعدہ کسی شاعر کو استاد نہیں بنایا،اردو شاعری میں چلی آرہیں پرانی روایا ت وفرسودہ طرز کہن کو آپ نے اپنی شاعری سے پاک رکھا اور اپنی شاعری میں نئے موضوعات اور خیا لات کے اظہار کا ذریعہ بنایا اس طرح انھوں نے اردو ادب میں نئے ایّام قائم کیئے۔

دراصل جب چکبست نے شاعری کی دنیا میں قدم رکھا تب ملک میں جنگ آزادی کو لیکر ایک جدوجہد چل رہی تھی ۔ شاعر جس ماحول میں رہتا ہے اور جیتا ہے ان چیزوں کا اس کی زندگی کا عنصر بننا ایک قدرتی اور لازمی جز خیال کیا جاتا ہے چکبست ایک روشن دماغ و روشن خیا ل شاعر تھے اور اپنے وطن عزیز کی آزادی کے متمنیّ تھے ،یہی وجہ ہے کہ انکی بیشتر نظمیں جدوجہد آزادی کی مظہر و حمایت کرتی دیکھائی دیتی ہیں ساتھ ہی انکی نظمیں نوجوانوں کے خیالات وجذبات کی عکاسی و ترجمانی کرتی نظر آتی ہیں۔
یوں تو چکبست نے اپنی شاعری میں اپنی راہیں خود ہی بنائی اور خود ہی ہموار کی ،لیکن کہیں کہیں وہ انیس کی شاعری کی تقلید کرتے ہوئے نظر آتے ہیں۔ہاں ان کے یہاں مرثیہ تو نہیں ،لیکن انھوں نے انیس کے مرثیہ والے انداز بیاں کو رامائن کے بیان میں صرف کرنے کی کامیاب کوشش کی ہے۔غزلوں ،نظموں کے علاوہ انھوں نے شخصی مرثیے بھی لکھے ہیں ۔اپنی قابل قدر تخلیقات کی بدولت اہل ادب کی نظر میں وہ آج بھی عزّت و احترام کی نظر سے دیکھے جاتے ہیں۔
چکبست ایک نقلابی شاعر تھے انھوں نے بیوہ عورتوں کی شادی کا بیڑہ اٹھایا حالانکہ ان کی مذہبی روایا ت میں اس فعل کو معیوب اور گنا ہ کے مترادف سمجھا جاتا تھا لیکن انھوں نے اس بات کی پرواہ کیے بغیر اپنے قوم میں پائی جانے والی طرز کہن کے خلاف آواز اٹھائی اسی طرح جہاں انھوں نے رامائن کے گیت لکھے وہیں انھوں نے مسلم قوم کو انکی امیر وراثت کا واسطہ دیکر بیدار کرنے کی کامیاب کوشش کی ۔اسطرھ انھوں نے اپنی شخصیت کے مطابق اپنی شاعری میں بھی اپنے ملک کے عوام کو ایک سیکولر سوچ والی ذہنیت رکھنے کی تلقین کی۔
شاعر ی کے ساتھ ساتھ آپ نے نثر نگاری میں نمایاں کارنامے انجام دیئے ۔ مضامین کے مجموعہ کے مطالعہ کے بعد چکبست کی شخصیت کے بہت سے مزید خوبصورت پہلو کھل کر سامنے آتے ہیں۔چکبست نے 1918ء میں ’’صبح امید‘‘ کے نام سے ایک ادبی رسالہ بھی نکالا۔اسکے علاوہ ’’صبح وطن‘‘ انکے دیوان کا نام ہے دراصل یہ دونوں انکے وہ عظیم کارنامے ہیں جن سے ان کے حبّ الوطنی کے جزبہ کی بھرپور عکّاسی ہوتی ہے۔
آئیے اب ہم چکبست کے الگ الگ اشعار کے ذریئے ان کی شاعری کے مختلف محاسن سے روشناس و لطف اندوز ہونے کی کوشش کرتے ہیں۔ ایک جگہ آپ استاد کی قدر کرنے کا درس دیتے ہوئے کہتے ہیں کہ
ادب تعلیم کا جوہر ہے زیور ہے جوانی کا
وہی شاگرد ہیں جو خدمتِ استاد کرتے ہیں
ایک دوسرے شعر میں عمر رفتہ کے یونہی عبث گزارنے کے کا پچھتاوا کرتے ہوئے کہتے ہیں۔
نہ جانی قدر تیری عمر رفتہ ہم نے کالج میں
نکل آتے ہیں آنسو جب تجھے ہم یاد کرتے ہیں
ایک اور جگہ انسان کے دردِ محبت سے آشنا ہونے کا ذکر کچھ یوں کرتے ہیں کہ
اگر درد محبت سے نہ انساں آشنا ہوتا
نہ کچھ مرنے کا غم ہوتا نہ جینے کا مزا ہوتا
اگر دم بھر بھی مٹ جاتی خلش خار تمنّا کی
دل حسرت طلب کو اپنی ہستی سے گلا ہوتا
چکبست ؔ کی حکمت و فلسفہ کی بصیرت کی عکاسی کرتا انکا یہ شعر دیکھیں۔
اک سلسلہ حوس کا ہے انساں کی زندگی
اس ایک مشت خاک کو غم دو جہاں کے ہیں
ایک ہی خیال پر جب دو بڑے شاعر طبع آزمائی کرتے ہیں تو کیا سماں باندھتے ہیں پہلے مو من خاں مومن نے ایک شعر دیکھیں کہ
ایک آنسو نے ڈبویا مجھ کو انکی بزم میں
بوند بھر پانی سے ساری آبرو جاتی رہی
اسی طرح کے خیال کو چکبست نے اپنے ایک شعرمیں کچھ اس انداز میں پیش کیا ہے کہ
رلایا اہل محفل کو نگاہِ یاس نے میری
قیامت تھی جو اک قطرہ ان آنکھوں سے جدا ہوتا
ایک اور خوبصورت ومرصع غزل سے چند اشعار ملاحظہ فرمائیں۔
انھیں یہ فکر ہے ہر دم نئی طرزِجفا کیا ہے
ہمیں یہ شوق ہے دیکھیں ستم کی انتہا کیا ہے
گنہگاروں میں شامل ہیں گناہوں سے نہیں واقف
سزا کو جانتے ہیں ہم خدا جانے خطا کیا ہے۔
نیا بسمل ہوں میں واقف نہیں رسم شہادت سے
بتا دے تو ہی اے ظالم تڑپنے کی ادا کیا ہے
امیدیں مل گئی مٹی میں دور ضبط آخر ہے
صدائے غیب بتلادے ہمیں حکم خدا کیا ہے
چکبست اپنے پیشہ سے وابستہ یعنی وکیلوں کی حالتِ زار پر بھی مزاح کرنے سے نہیں چوکتے ،ملاحظہ فرمائیں۔
مرتے دم جب ملک الموت مقابل آیا
دل ناشاد یہ سمجھا کہ مؤ کل آیا
ہم لائے مؤکل کو تقدیر اسے کہتے ہیں
وہ پھنس کے نکل بھاگا تقدیر اسے کہتے ہیں
قومی یکجہتی کی منظر کشی کرتا ایک بند مالحظہ فرمائیں
دیوار ودر سے اب ان کا اثر عیاں ہے
اپنی رگوں میں اب تک ان کا لہو رواں ہے
اب تک اثر میں ڈوبی ناقوس کی فغاں ہے
فردوس گوش اب تک کیفیتِ اذاں ہے
کشمیر سے عیاں ہے جنّت کا رنگ اب تک
شوکت سے بہہ رہا ہے دریائے گنگ اب تک
چکبست کی نظم رامائن کا ایک سین میں سے ایک بند ملاحظہ فرمائیں اس بند میں رام چندر جی جب اپنی ماں سے رخصت لینے کے لیے آتے ہیں اس سین میں والدین کی فرمانبرداری اور بیٹے کی رخصتی کا ماں کوکس قدر درداور ملال ہے اسکا منظرچکبست نے نہایت دلکش انداز میں پیش کیا ہے ،ملاحظہ فرمائیں۔
رخصت ہوا وہ باپ سے لے کر خدا کا نام
راہِ وفا کی منزلِ اوّل ہوئی تمام
منظور تھا جو ماں کی زیارت کا انتظام
دامن سے اشک پوچھ کے دل سے کیا کلام
اظہارِ بیکسی سے ستم ہوگا اور بھی
دیکھا ہمیں اداس تو غم ہوگا اور بھی
دل کو سنبھالتا ہو ا آخر وہ نو نہال
خاموش ماں کے پا س گیا صورتِ خیال
دیکھا تو ایک در میں ہے بیٹھی وہ خستہ حال
سکتا سا ہو گیا ہے یہ ہے شدّت ملال
تن میں لہو کا نام نہیں زرد رنگ ہے
گویا بشر نہیں کوئی تصویرِ سنگ ہے
کیا جانے کس خیال میں گم تھی وہ بے گناہ
نورِ نظر پہ دیدہء حسرت سے کی نگاہ
جنبش ہوئی لبوں کو بھری ایک سرد آہ
لی گوشہ ہائے چشم سے اشکوں نے رخ کی راہ
اپنی نظموں میں چکبست نے نہ صرف ہندوؤں کو مخاطب کیا ،بلکہ انھوں نے مسلمانوں کو بھی انکے قابل فخر ورثہ کا واسطہ دیکر جگانے کی پر زور کوشش کی ۔نظم سے ایک بند حظہ فرمائیں ۔
دکھادو جوہر اسلام اے مسلمانوں
وقار قوم گیا قوم کے نگہبانوں
ستون ملک کے ہو قدر فوقیت جانو
جفا وطن پہ ہے فرضِ وفا کو پہچانو
نبی خلق مروت کے ورثہ دار ہو تم
عرب کی شان حمیت کی یادگار ہو تم
اردونظم کے یہ عظیم شاعر 12 فروری 1926ء کو ایک مقدمہ کی پیروی کے سلسلے میں رائے بریلی تشریف لے گئے ،دوران پیشی عدالت میں بحث کی اور سہ پہر کو لکھنؤ کے لیے واپسی کی خاطر اسٹیشن پہ جو آئے ،اور ریل میں سوار ہو کر اپنی سیٹ پر بیٹھے ہی تھے کہ دماغ پر فالج کا اٹیک ہوا ۔جس کے چلتے مسافروں نے اسٹیشن پر ہی اتار لیا اور ویٹنگ روم میں لٹا دیا گیا ۔جہاں قریب شام 7بجے آپ اس دنیائے فانی سے قریب 44سال کی قلیل عمر میں ہمیشہ ہمیش کے لیے رخصت ہوگئے۔ اس کے بعد محشر ؔ لکھنوی نے آپ ہی کے مصرع سے تاریخ نکالی ۔
انھیں کے مصرع سے تاریخ سے ہمراہ عزا
موت کیا ہے انہیں اجزا کا پریشاں ہونا

مینیجر اسلامیہ گرلز کالج ،
مالیر کوٹلہ،پنجاب
Phone.9855259650
abbasdhaliwal72@gmail.com